131

شعیب اختر نے بیان کیا اپنی زندگی کا اہم ترین واقعہ

پاکستان کرکٹ کے مایہ ناز باؤلرشعیب اخترنے اپنی زندگی کا بہت ہی اہم واقعہ سناتے ہوئے کہا کہ جب میں پنڈی کلب میں کرکٹ کھیلا کرتا تھا اور گھر واپسی پر راستے میں ایک گنے کے جوس والا ریڑی لگایا کرتا تھا. اور مجھے گنے کا جوس بہت پسند تھا. میں نے ایک دن اُس سے کہا کہ مجھے مفت گنے کا جوس پلایا کرو جب میں سٹار بنوں گا تو تمھیں گنے کے جوس کے بدلے مشین لے کر دوں گا ۔ پھرکیا ہوا میری اُس سے آہستہ آہستہ دوستی ہو گئی ۔

اُس نے ایک دن مجھ سے کہا کہ کیا تمھیں یقین ہے کہ تم قومی کرکٹ ٹیم کے سٹار بن پاؤ گے. میں نے کہا کہ دوست میری آنکھوں میں دیکھو کتنی آگ بھری ہے ۔ مجھے یقین ہے میں سٹار ضرور بنوں گا۔ پھر کیا ہوا اس نے مجھےڈیڑھ سال تک مفت گنے کا جوس پلایا، جب میں سٹار بن کرپنڈی واپس آیا تو مجھے پتہ چلا کہ میرے دوست کی وفات ہو چکی ہے.

میں بہت زیادہ افسردہ ہوا، اُس کا گھر تلاش کر کے میں اُس کے گھر والوں سے ملنے چلا گیا، اور اس کے گھر والوں سے کہا کہ اب میں آپ لوگوں کو مشین نہیں بلکہ دُکان بنوا کر دوں، اور میں نے دُکان بنوا کر دی.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں