83

سعودی گرفتارشہزادے رقم واپس کرنے کو تیار ہو گئے.

بدعنوانی کے الزام میں گرفتار 95 فیصد شخصیات تصفیےاور مالی رقوم واپس کرنے پرآمادہ ہوگئے ہیں۔امریکی اخبار نیویارک ٹائمز کو انٹرویو دیتے ہوئے شہزادہ محمد بن سلمان نے کہا سعودی عرب میں ماضی میں بدعنوانی کے خلاف کئی مہمیں چلائی گئیں تاہم ان میں صرف نچلے طبقے کو ہی نشانہ بنایا گیا تھا.جس کے باعث ناکامی سے دوچار ہونا پڑا تھا.

شہزادہ محمد بن سلمان نے کہا کہ جب ان کے والد شاہ سلمان نے 2015ء میں اقتدار سنبھالا تو ملک کے ان اعلیٰ شخصیات کا مکمل ڈیٹا جمع کیا گیا جو مختلف طریقوں سے بدعنوانی میں ملوث ہیں. تین سال کی انتھک کوشش کے بعد دو سو اہم شخصیات کی لسٹ تیار کی گئی تھی.

شہزادہ محمد بن سلمان کا مزید کہنا تھا کہ زیر حراست شخصیات میں سے ایک فیصد افراد نے اپنی بے گناہی ثابت کرکے آزاد ہوگئے ہیں. تاہم چار فیصد ملزمان نےالزامات کو مسترد کرکے عدالت کا سامنا کرنے کا فیصلہ کیا۔ ولی عہد کا کہنا ہے کہ ملزمان کے ساتھ تصفیے کے نتیجے میں ملکی خزانہ میں 100 ارب ڈالر واپس لوٹ جائیں گے.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں